شاہوں کا شاہ عشق ہے، صدر ِصدور عشق

شاہوں کا شاہ عشق ہے، صدر ِصدور عشق

شاہوں کا شاہ عشق ہے، صدر ِصدور عشق
دربار ِدل میں تخت نشیں ہے حضور عشق

اس حسن ِخوش ادا کی تجلی میں یوں لگا
موسیٰ ہوں، لے گیا ہے، سر ِکوہِ طور عشق

اس بار سامنا تھا سلیمان کا تجھے
بلقیس! اب بھی ہونا تھا تجھ کو ضرور عشق

تیرے دماغ کا بھی زلیخا یہی خلل
منصور تیرے سر کا سارا فتور عشق

صحرا، نواردیوں میں کھپاتا ہے قیس کو
کچے گھڑے پہ کرتا ہے دریا عبور عشق

فرہاد تیرے ہاتھوں کا تیشہ یہی تو ہے
شیریں! تجھے بھی کر گیا ہے چور چور عشق

رانجھے تیرا بھی جرم فقط کار ِعشق ہے
ہیرے! تیرا بھی سارے کا سارا قصور عشق

تصویر

Ek Rooz Tum Ne

Ek Rooz Tum Ne
Thaama Tha Hath Mera

Mere Hath Se Tumhare Hath Ki
Khushboo Nahi Jaati

Tum Bohat Pyar Se
Pukarte Thy Naam Mera

Mere Kaano Se Tumhari Wo
Awaaz Nahi Jaati

Main Bulati Bhe Nahi Thi
Aur Tum Aa Jaty Thy

Ab Bulaane Par Bhe Meri Awaaz
Tum Tak Nahi Jaati

Main Janti Hon Ye Shehar
Ye Raste Tumhare Nahi

Phir Bhe Meri Aankhon Se
Intezaar Ki Aadat Nahi Jaati..