ﺭﯾﺖ ﺳﮯ ﺑﺖ ﻧﮧ ﺑﻨﺎ ﺍﮮ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﭼﮭﮯ ﻓﻨﮑﺎﺭ

ﺭﯾﺖ ﺳﮯ ﺑﺖ ﻧﮧ ﺑﻨﺎ ﺍﮮ ﻣﯿﺮﮮ
ﺍﭼﮭﮯ ﻓﻨﮑﺎﺭ
ﺍﮎ ﻟﻤﺤﮧ ﮐﻮ ﭨﮭﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮭﮯ
ﭘﺘﮭﺮ ﻻﺩﻭﮞ
ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﻧﺒﺎﺭ ﻟﮕﺎﺩﻭﮞ
ﻟﯿﮑﻦ
ﮐﻮﻥ ﺳﮯ ﺭﻧﮓ ﮐﺎ ﭘﺘﮭﺮ ﺗﯿﺮﮮ ﮐﺎﻡ
ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺳﺮﺥ ﭘﺘﮭﺮ ﺟﺴﮯ ﺩﻝ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﺑﮯ
ﺩﻝ ﺩﻧﯿﺎ
ﯾﺎ ﻭﮦ ﭘﺘﮭﺮﺍﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﺎ ﻧﯿﻞ
ﭘﺘﮭﺮ
ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﺤﯿﺮ ﮐﮯ
ﭘﮍﮮ ﮨﻮﮞ ﮈﻭﺭﮮ
ﮐﯿﺎ ﺗﺠﮭﮯ ﺭﻭﺡ ﮐﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ
ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﮔﯽ
ﺟﺲ ﭘﺮ ﺣﻖ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ
ﻃﺮﺡ ﮔﺮﺗﯽ ﮨﮯ
ﺍﮎ ﻭﮦ ﭘﺘﮭﺮ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﮩﻼﺗﺎ ﮨﮯ
ﺗﮩﺬﯾﺐِ ﺳﻔﯿﺪ
ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺮﻣﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﯿﺎﮦ ﺧﻮﮞ
ﺟﮭﻠﮏ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ
ﺍﮎ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﺎ ﭘﺘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮﺗﺎ
ﮨﮯ ﻣﮕﺮ
ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺸﮧ ﺯﺭ ﮨﻮ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮨﺎﺗﮫ
ﺁﺗﺎ ﮨﮯ
ﺟﺘﻨﮯ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﺳﺐ
ﭘﺘﮭﺮ ﮨﯿﮟ
ﺷﻌﺮ ﺑﮭﯽ ﺭﻗﺺ ﺑﮭﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻭ
ﻏﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﭘﺘﮭﺮ
ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻟﮩﺎﻡ ﺗﯿﺮﺍ ﺫﮨﻦ ِ ﺭﺳﺎ ﺑﮭﯽ
ﭘﺘﮭﺮ
ﺍﺱ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﻓﻦ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ
ﭘﺘﮭﺮ ﮨﮯ
ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺘﮭﺮ ﮨﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﻣﯿﺮﯼ ﺯﺑﺎﻥ
ﭘﺘﮭﺮ ﮨﮯ
Sand-Art-Sculptures-By-Award-Winning-Sand-Sculptor-Carl-Jara-1

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: